چینی کمپنیوں کی جانب سے فنڈ ریزنگ ،24ملین روپے کا عطیہ

, ,

گوادر میں چینی کمپنیوں نے جمعہ کو چائنہ بزنس سینٹر میں فنڈ ریزنگ کے دوسرے راونڈ میں 5.884ملین روپے کا عطیہ دیا۔گوادر پرو کے مطابق فنڈ ریزنگ مہم کے پہلے دور کے دوران گوادر میں کام کرنے والی چینی کمپنیوں کی طرف سے مجموعی طور پر 15 ملین روپے کی رقم جمع اور عطیہ کی گئی ہے جس میں سی او پی ایچ سی نے 2.36 ملین روپے کا عطیہ کیا۔گوادر پرو کے مطابق اس کے بعد ادار وں جیسے کہ نیو گوادر انٹرنیشنل ایئرپورٹ پروجیکٹ 100,000 روپے، چائنا ہاربر انجینئرنگ کمپنی 700,000 روپے، چائنا پاکستان فرینڈ شپ ہسپتال600,000روپے۔ گوادر ہوا فا ایکسپو سینٹر 200,000 روپے، سی سی سی سی ۔ایف ایچ ڈی آئی انجینئرنگ کمپنی 200,000روپے ، لین ای ٹریڈ سٹی 150,000 روپے ، CCCCسی سی سی سی ۔ پی آئی سی ایل110,000 روپے ، ایچ کے سن100,000 روپے ، یو لن ہولڈنگز100,000 روپے ، ساوتھ سنٹرل یونیورسٹی آف فاریسٹری اینڈ ٹیکنالوجی سے پروفیسر وانگ سین 100,000 روپے اور ، ہینگ گینگ ٹریڈ کمپنی نے 100,000 روپے کا عطیہ د یا۔ انفرادی اور نجی امداد کے علاوہ چین کی حکومت پہلے ہی 100 ملین یوآن دینے کا وعدہ کر چکی ہے۔گوادر پرو کے مطابق چینی وزارت خارجہ کے ترجمان،چاو لیجیا ن نے اعلان کیا تھا کہ چین نے چین پاکستان اقتصادی راہداری ( سی پیک ) کے سماجی اور اقتصادی تعاون کے فریم ورک کے تحت پاکستان کو 4000 خیمے، 50,000 کمبل اور 50,000 ترپالیں فراہم کی ہیں۔
دوسری جانب چین کی شمسی توانائی کی کمپنی زونرجی اور بجلی پیدا کرنے والے آلات بنانے والی کمپنی شنگھائی الیکٹرک پاکستان میں تباہ کن سیلاب سے متاثرہ افراد کے لیے مجموعی طور پر 19 ملین روپے کا تعاون کرے گی ۔ گوادر پرو کے مطابق زونرجی نے پاکستان میں سیلاب سے نمٹنے کی کوششوں کے لیے چین میں پاکستانی سفارت خانے کو ایک لاکھ یو آن کا عطیہ دیا ہے، زونرجی سولر ڈیولپمنٹ پاکستان لمیٹڈ کے ایک سینئر اہلکار کے مطابق کمپنی 6.4 ملین روپے مالیت کے پورٹیبل سولر انرجی ڈیوائسز اور 2.4 روپے بھی فراہم کرے گی۔ اہلکار نے بتایا کہ سیلاب زدہ لوگوں کے لیے 2.4ملین مالیت کی خوراک کا سامان بھی شامل ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ کل پیکج کی مالیت 12 ملین روپے ہے۔گوادر پرو کے مطابق زونرجی پاکستان کے سولر انرجی سیکٹر میں ایک بڑا کھلاڑی ہے، جس نے بہاولپور پنجاب میں 300 میگاواٹ کا سولر پاور پلانٹ لگایا ہے۔ پرائیویٹ پاور اینڈ انفراسٹرکچر بورڈ (پی پی آئی بی) کے ایک اہلکار کے مطابق کمپنی بہاولپور کے قائداعظم سولر پارک میں 300 میگاواٹ کا ایک اور سولر پاور پلانٹ بھی لگانے کا ارادہ رکھتی ہے۔گوادر پرو کے مطابق دریں اثنا، ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ شنگھائی الیکٹرک بھی سندھ کے علاقے کے عوام کے لیے 70 لاکھ روپے مالیت کا امدادی سامان فراہم کرے گی۔ ذرائع نے بتایا کہ چیک تیار کر لیا گیا ہے اور کمپنی کے حکام امدادی سامان اکٹھا کر رہے ہیں۔ ذرائع نے مزید کہا کہ کمپنی اس حوالے سے باضابطہ اعلان جمعہ یا پیر کو کرے گی۔گوادر پرو کے مطابق شنگھائی الیکٹرک سینو سندھ ریسورس لمیٹیڈ کا مالک ہے، جو سندھ کے ضلع تھرپارکر میں تھر کول بلاک ون میں 7.8 ملین ٹن سالانہ لگنائٹ کوئلے کی کان کو چلانے کے لیے ایک خاص مقصد کی گاڑی ہے۔ یہ فرم تھر کول بلاک ون(TCB-1) پاور جنریشن کمپنی کی بھی مالک ہے، جو تھر بلاک ون میں 1,320 میگاواٹ کے مربوط مائن ماوتھ پاور پلانٹ کو چلانے کے لیے ایک اور خاص مقصد کی گاڑی ہے۔ کمپنی پہلے ہی اپنی سائٹ سے کوئلے کی پہلی تہہ کی کھدائی کر چکی ہے اور پاور پلانٹ کا کام بھی تکمیل کے قریب ہے۔ دونوں منصوبوں کی لاگت تقریبا 4 بلین ڈالر ہے۔ تھر کول بلاک ون کول پاور پلانٹ میں آلودگی کو کم کرنے اور پیداوار بڑھانے کے لیے الٹرا سپر کریٹیکل ٹیکنالوجی شامل ہے۔

Leave a Reply